نوبیل انعام 2019: طبعیات کا انعام کائنات میں نئے افق تلاش کرنے والوں کے نام

تصویر کے کاپی رائٹ
unknown

Image caption

(بائیں سے دائیں) جیمز پیبلز، ڈڈیئر کیولوز اور مائیکل مئر

طبعیات کے میدان میں سنہ 2019 کے نوبیل انعام کا حقدار ان تین سائنسدانوں کو قرار دیا گیا ہے جنھوں نے کائنات سے متعلق ایسی چیزیں دریافت کی ہیں جن کی ’پہلے مثال نہیں ملتی‘۔

اس بات کا اعلان سویڈن کے دارالحکومت سٹاک ہوم میں نوبیل انعامات کی سالانہ تقریب میں کیا گیا۔

فزکس میں یہ انعام جن تین سائنسدانوں میں مساوی تقسیم کیا جائے گا، ان میں جیمز پیبلز، مائیکل مئر اور ڈڈیئر کیولوز شامل ہیں۔ ان تینوں ماہرین کو مشترکہ طور پر یہ انعام کائنات کے ارتقاع پر تحقیق اور سنہ 1995 میں دور کہکشاں میں سورج جیسے ایک سیارے کی دریافت پر دیا گیا ہے۔

یہ بھی پڑھیے

خلیے آکسیجن کی کمی بیشی سے کیسے نمٹتے ہیں؟

فزکس: پچپن سالوں میں کسی خاتون کے لیے پہلا نوبیل انعام

نوبیل انعام یافتہ 30 برس تک نظرانداز کیوں؟

ہبل نے ستاروں کو بنتے اور ختم ہوتے دیکھا

نو ملین کرونر (سات لاکھ 38 ہزار پاؤنڈ) کی انعام کی رقم ان تینوں میں تقسیم کی جائے گی۔

نوبیل کمیٹی کے ایک رکن، اولف ڈینیلسن کا کہنا تھا کہ ’یہ دونوں انعامات ہمیں کائنات اور کائنات میں ہمارے مقام سے متعلق نہایت اہم معلومات فراہم کرتے ہیں۔

’ان میں پہلی تحقیق اس لحاظ سے بہت زبردست ہے کہ یہ کائنات کی ابتدا کے بارے میں بتاتی ہے، جبکہ دوسری اس قسم کے سوالوں کے جواب فراہم کرنے کی کوشش کرتی ہے کہ کیا ہم اس کائنات میں اکیلے ہیں، کیا کائنات میں کسی اور جگہ پر بھی زندگی کا وجود ہے؟‘

تصویر کے کاپی رائٹ
NASA

Image caption

کائنات میں مائیکرو ویو پر مشتمل پس منظر روشنی کے اس فوارے کی عکاسی کرتا ہے جو بِگ بینگ کے بعد پھوٹا تھا

تفصیل کے مطابق امریکہ کی پرنسٹن یونیورسٹی سے منسلک جیمز پیبلز کو جن خدمات کے صلے میں انعام دیا گیا ہے ان میں کائنات کے ارتقاع سے متعلق علم میں اضافہ اور نظام کائنات میں ہماری زمین کے مقام کے حوالے سے تحقیق شامل ہے۔

کچھ دیگر ساتھی ماہرین کے ہمراہ جیمز پیبلز نے پیشنگوئی کی تھی کہ بِگ بینگ کے وقت کائنات میں مائیکرو ویو تابکاری موجود تھی۔

اس کے علاوہ انھوں نے کائنات میں مادۂ سیاہ اور اس سے منسلک توانائی کے بارے میں بھی تحقیق کی جس سے کائنات سے متعلق سائنسی نظریات کو آگے بڑھانے میں مدد ملی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ
ESO / M KORNMESSER

Image caption

مائیک مئر اور ڈڈئر کیولوز کو نوبیل انعام 51 پیگاسی بی نامی ایک سیارے کی دریافت پر دیا گیا ہے (آرٹسٹ کی نظر میں)

جب ان سے پوچھا گیا کہ فزکس کے شعبے میں ان کی اہم ترین تحقیق کیا ہے تو جیمز پیبلز کا کہنا تھا کہ ’ان سے یہ بات بڑے شد و مد سے پوچھی جاتی ہے، (تاہم) ان کا کام مشترکہ کوششوں کا نتیجہ ہے۔ یہ کام میری پوری زندگی پر پھیلا ہوا ہے۔‘

مائیک مئر اور ڈڈیئر کیولوز کو نوبیل انعام 51 پیگاسی بی نامی ایک سیارے کی دریافت پر دیا گیا ہے جو دراصل گیسوں کا ایک بہت بڑا مجموعہ ہے جو ہماری زمین سے 50 نوری سال کی دوری پر ہے۔

یہ کائنات کے اس مقام پر پہلی دریافت ہے جس میں ہائیڈروجن کے ایٹم آپس میں ضم ہو کر ہیلیم کے ایٹم بناتے ہیں۔ یہ ستاروں کی وہ قسم ہے جو کائنات میں بہت زیادہ ہے اور ہمارا اپنا سورج بھی اس سلسلے کا ستارہ ہے۔

امیرکن انسٹیٹیوٹ آف فزکس کے سربراہ مائیکل مولونی کہتے ہیں کہ ’کائنات کی بنیادی ساخت اور دور دراز کے شمسی نظاموں کے اندر نئی دنیائیں دریافت کرنے کے حوالے سے ان سائنسدانوں نے جو کام کیا ہے، اس نے علمِ کائنات کے شعبوں میں نئی تحقیق کے دروازے کھول دیے ہیں۔‘

ان کے بقول ’ہمارے اپنے نظام شمسی سے باہر ایک ایسے سیارے کی دریافت جو (سورج کی قسم کے) ایک ستارے کے گرد گھوم رہا ہے، اس نے کائنات میں ہمارے مقام یا حیثیت کے بارے میں ہمارے خیالات کو تبدیل کر دیا ہے۔ اس کائنات میں جس میں بہت سے ایسے معمے ہیں جو ابھی حل ہونا باقی ہیں۔‘


Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *